بو سو کنار کرنے سے شرمگ اہ سے قطرے نکلیں ۔ غسل فرض ہو گا یا نہیں؟

زوجین کے باہمی بوس وکنار کے وقت شرمگاہ سے جو پانی نکلتا ہے وہ مذی ہے، فقہاء نے مذی کی پہچان یہ بتائی ہے کہ ”یہ ایسا سفیدی مائل پتلااور شفاف پانی ہے جو ملاعبت کے وقت نکلتا ہے، اور اس کے نکلنے کے بعد شہوت میں بالعموم مزید اضافہ ہوجاتا ہے“ اور اس کا حکم یہ ہے کہ اس کے نکلنے سے صرف وضو واجب ہوتا ہے، غسل واجب نہیں ہوتا،

البتہ وہ رطوبت جس کے بعد شہوت ختم ہوکر طبیعت میں فتور آجائے وہ شرعاً منی ہے اس سے غسل لازم ہوتا ہے، اور عورت کی منی کی پہچان فقہاء نے یہ بیان کی ہے کہ وہ ”وہ پتلی اور زردی مائل ہوتی ہے“ اور خروج کے وقت بالعموم اس کا ا حساس ہوجاتا ہے اور ادنی توجہ سے اس کا احساس کیا جاسکتا ہے،

اگر اتفاقاً کبھی احساس نہ ہو تو اگر نکلنے والی رطوبت زرد رنگ کی ہو تو وہ منی ہے جو شہوت کے ساتھ خارج ہوئی؛ لہٰذا اس کے بعد غسل واجب ہے اگرچہ ابھی دخول نہ ہوا ہو