جو شخص یہ کلمات سات بار دعا مانگنے سے پہلے پڑھ لے تو ساتوں آسمانوں کے فرشتے ہلچل میں آجاتے ہیں

اس تحریر میں کچھ ایسے کلمات پیش کئے جارہے ہیں جو کلمات اللہ تبارک وتعالیٰ نے حضرت موسیٰ ؑ پر نازل فرمائے یعنی حضرت موسیٰؑ کو وہ کلمات سکھائے جن کو پڑھ کر اللہ تبارک وتعالیٰ سے جو بھی مانگا جائے وہ فورا مل جاتا ہے تو بھی شخص ان کلمات کو دعا مانگنے سے پہلے سات بار پڑھ لے تو ساتوں آسمانوں کے جو فرشتے ہیں وہ ہلچل میں آجاتے ہیں اور اللہ تبارک وتعالیٰ سے جو بھی مانگا جائے وہ فورا مل جاتا ہے ایک حدیث ہے کہ حضرت ابو سعید رضی اللہ تعالیٰ عنہ سے روایت ہے کہ حضرت محمد صلی اللہ تعالیٰ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا کہ ایک مرتبہ حضرت موسیٰ علیہ السلام نے اللہ تبارک وتعالیٰ سے عرض کیا کہ اے اللہ مجھے کچھ ایسا عمل بتا دیجئے کہ جس کو میں پڑھوں اور تیری حمد وثنا بیان کروں اور تجھ سے ہر چیز مانگ لوں ان کلمات کو پڑھ کر تو اللہ پاک نے فرمایا کہ تو کثرت سے یہ پڑھا کر لا الہ الا اللہ تو حضرت موسیٰ علیہ السلام نے فرمایا یہ عمل تو ہر کوئی کرتا ہے

تو مجھے کوئی مختلف عمل بتائیے تو اللہ تبارک وتعالیٰ نے ارشاد فرمایا کہ اے موسیٰ اگر تو ترازو کے ایک پلڑے میں ساتوں زمینوں کو اور ساتوں آسمانوں کو رکھ دے اور ایک پلڑے میں لا الہ الا اللہ کو رکھ دے تو اس کی جو طاقت جو اس کا وزن ہو گا وہ اس سے زیادہ ہو گا تو جب بھی آپ اللہ پاک سے کچھ بھی مانگنا چاہیں اللہ پاک سے کوئی بھی فریاد کرنا چاہیں کوئی مشکلات آپ کی ہوں تو لا الہ الا اللہ کو کثرت سے پڑھ لیجئے اللہ تبارک وتعالیٰ آپ کی ہر مشکل کو آسان فرما دے گا اور جو اللہ پاک سے آپ مانگو گے وہ آپ کو مل جائے گا جب بھی اللہ پاک سے کچھ بھی مانگیں کوئی بھی دعا ہو آپ کی کوئی بھی مشکل ہو جو حل نہ ہورہی ہو تو ان کلمات کو پڑھ کر پھر دعا مانگئے۔ وہ کلمات یہ ہیں اللھم انت خلقتنی وانت تھدینی وانت تطعمنی وانت تسقینی وانت تمیتنی وانت تحیینی۔ان کلمات کو سات مرتبہ پڑھ لیجئے اور پھر اللہ پاک سے دعا کیجئے انشاء اللہ ضرور بضرور قبول ہو گی

دعا میں اخلاص و فکر کا ہونا لازمی ہے اور عاجزی و انکساری کے ساتھ گڑگڑا کر دیا کیجئے اللہ تعالیٰ کے سامنے اپنے مشکلات و حاجات پیش کیجئے اور اپنے گ ن ا ہ و ں پر استغفار کیجئے اور توبہ کیجئے اور آگے گ ن ا ہ و ں سے بچنے کا پکا ارادہ کیجئے۔اپنے اعمال پر توجہ دیجئے حقوق العباد لازمی پورے کیجئے اور حقوق اللہ کا بھی خیال رکھئے کیونکہ اللہ کبھی حقوق کے تلف کرنے والے کو پسند نہیں فرماتا قیامت کے دن اللہ اپنے حقوق تو معاف فرمادے گامگر حقوق العباد یعنی اللہ کی مخلوق کے حقوق جو آپ نے ادا نہیں کئے ہوں گے ان کو معاف نہیں فرمائے گا ان پر آپ کو سزاد دی جائے گی اور آپ کی نیکیوں سے ان حقوق کو ادا کیا جائے گا ۔ اللہ ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔آمین