یہ چار عادتیں دماغ کو کمزور کرتی ہیں۔

امام علی ؑ سے پوچھا گیا یا علی ؓ وہ کونسی عادتیں ہیں جو انسان کے دماگ کو کمزور کرتی ہیں بس جیسے ہی یہ پوچھا گیا تو امام علی ؓ نے فرمایا اے شخص جو انسان ان چار عادتوں کو اپناتا ہے تو اس کا دماغ کمزور ہوتاجاتا ہے پہلی عادت کہ وہ باربار تیز آوازیں سنتا ہو یا بار بار زور زور سے بات کرتا ہو

دوسری عادت کہ وہ ہر تھوڑی دیر کے بعد کھانا کھاتا ہو جو انسان زیادہ کھانا کھاتا ہے چپچپی چیزیں کھاتا ہے تو اس کا دماغ کمزور ہونے لگتا ہے اور تیسری عادت جس سے دماغ کمزور ہوتا ہے وہ ایک جگہ بیٹھے رہنا ہے جو انسان جسمانی کام نہیں کرتا سارا سارا دن لیٹے رہتا ہے بیٹھا رہتا ہے تو یوں اس کا دماغ کمزورہوتا جاتا ہے۔

اور چوتھی عادت جس سے دماغ کمزور ہوتا ہے وہ سیکھنے کی جستجو کو چھوڑنا ہے یادرکھنا جو انسان سیکھنے کی کوشش کو چھوڑ دیتا ہے اور یہ سمجھنے لگتا ہے کہ اسے سب کچھ آگیا تووہیں سے اس کا دماغ کمزور ہونے لگتا ہے اور وہ طاقت جو اللہ نے دماغ کو بخشی ہے اس سے وہ دن بدن محروم ہونے لگتا ہے اے شخص اگر اپنے دماغ کو تیز بنانا چاہتے ہو

اور یہ چاہتے ہو کہ تمہارے دماغ کی صلاحیتیں بہتر سے بہترین ہونے لگیں تو ان چار عادتوں سے دوررہنا اللہ تمہارے دماغ کو تیز اور ہر قسم کی کمزوری سے دور رکھے گا۔دماغ میں خون کی کمی کی وجہ سے دماغی کمزوری واقع ہوتی ہے۔

اس کی عام علامات آنکھوں کے سامنے اندھیرا آنا سردرد رہنا چکر آنا ہیں جسمانی کمزوری بھی ضعف دماغ کی وجہ بنتی ہے۔دس تولے دھنیا آدھا کلو پانی میں ابال لیں جب پانی تھوڑا سا رہ جائیں تو اس میں دو چھٹانک مصری ملا کر پکائیں جب گاڑھا ہو جائے تو اتار لیں اور روازنہ سات ماشے چاٹیں۔

صبح کے وقت سات عدد بادام مغز اوپر سے دس تولے گاجرون کے پانی میں گائے کا دودھ آدھا کلو ملا کر پینے سے دماغ کو طاقت ملتی ہے اس کے علاوہ سبز الائچی کا شربت اور عرق گلاب بھی دماغ کو تقویت دیتا ہے دماغی کمزوری دور کرنے کے لئے سونف کا عرق بھی بہت مفید ہے۔دماغی کام کرنے والوں کے لئے شہد کا استعمال ایک بہترین ٹانک ہے دودھ میں شہد ملا کر پینے سے حافظہ بہتر ہو جاتا ہے دماغ کا قوت حاصل ہوتی ہے حافظے کی کمزوری ختم ہو جاتی ہے۔

اس کے علاوہ شہد کا استعمال حافظے کو تیز کرتا ہے طبیعت میں گبھراہٹ اور اختلاج قلب کو دور کرتا ہے۔دماغی صحت کے بغیر ایک مکمل صحت مند زندگی کا تصور ممکن ہی نہیں کیونکہ دماغ انسانی جسم میں کنٹرول روم کی حیثیت رکھتا ہے، اگر دماغ کی کارکردگی درست نہیں تو کسی بھی شخص کے معمولاتِ زندگی بری طرح متاثر ہوتے ہیں۔

دماغ انسانی جسم کا وہ حصہ ہے جو پورے جسم کو کنٹرول کرتا ہے اسی وجہ سے دماغی بیماریاں شخصیت پر بری طرح سے اثر انداز ہوتی ہے، مہنگے علاج کے علاوہ اس بیماری سے نجات کے لیے مختلف گھریلو ٹوٹکے بھی آزمائے جاتے ہیں۔دماغ کمزور ہونے کا شکوہ اکثر لوگ کرتے دکھائے دیتے ہیں، یہ ایسی بیماری ہے جس کے علاج کے لیے لوگ مہنگی ادویات تک استعمال کرنے کو تیار ہوتے ہیں۔اللہ ہم سب کا حامی و ناصر ہو۔آمین