گوشت نے پکار کر کہا سرکار ﷺ مجھے نہ کھائیں

ایک ایسے گوشت کا عشق مصطفیٰ ﷺ پڑھتے ہیں اور محبت رسول پڑھتے ہیں کہ جس کو پکایا گیا ہے اور اس کے اندر زہر ملادیاگیا ہے۔ زہریلاگوشت حضورﷺ کی بارگاہ میں پیش کیا جاتا ہے تو گوشت کس طرح محبت کا اظہار کرتا ہے دل تھام کر پڑھیں۔

حضرت انس بن مالک ، حضرت جابر بن عبداللہ، حضرت ابو ہریر ہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ایک یہودی عورت زینب بنت حارث حضور پاکﷺ کا یہ فرمان سن کر کہا اگر کوئی دعوت دے تو قبول کرنی چاہیے آپ کی بارگاہ میں حاضر ہوئی اور حضو ر پاک ﷺ اور آپ کے صحابہ کرام کو کھانے کی دعوت دی۔

(7ہجری میں دعوت قبول ہوئی) چنانچہ اس نے دعوت کے کھانے میں زہرملا دیا جس کو کھا کر بعض صحابہ کرام بے ہوش اور بعض اللہ کو پیارے ہوگئے ۔ جب حضور پاکﷺ نے اس کھانے میں گوشت ایک لقمہ لیا، منہ میں رکھ کر چبایا لیکن اس کو نگلا نہیں بلکہ اس کو تھوک کر فرمایا اس گوشت نے مجھے بتایا کہ مجھے نہ کھائیے مجھ میں زہر ملایا گیا ہے ۔

چنانچہ اس عورت کو بلایا گیا اور اس نے کہا کہ میں دیکھنا چاہتی تھی کہ اگر آپ اللہ کے سچے رسول ہیں تو یہ زہر آپ پر اثر نہ کرے گا اور آپ بچ جائیں گے ۔

یہ گوشت جو پکایا گیا ہے زندہ نہیں بلکہ پکا ہوا کھانا ہے اور عظمت مصطفیٰ ﷺ، عشق مصطفیٰﷺ میں یہ کہہ رہا ہے حضورﷺ مجھے نہ کھائیں مجھ میں زہر ملایا گیا ہے اور اپنی حاضری محبت رسول ﷺ والوں میں لگا رہا ہے۔ اس عورت کا باپ اور بیٹا اسلام کے خلاف جنگ میں قتل ہوا تھا۔