جانیں کون لوگ ہیں جو روزہ چھوڑ سکتے ہیں کیا دودھ پلانے سے روزہ ٹوٹ جاتا ہے ؟

ایک سوال ہے کہ کیا دودھ پلانے سے بچے کو دودھ پلانے سے روزہ ٹوٹ جاتا ہے اور حاملہ اور دودھ پلانے والی عورت روزہ کیسے رکھے ؟ اس کاجواب ہے ۔ آپ سب جانتے ہیں پورے سال میں ماہ رمضان ایک ایسا مقدس پیریڈ ز ہے ۔

جس میں اللہ ہم سب کے تزکیہ نفس کے لیے ہم پر تیس روزے فرض کرتاہے ہم نے پورا مہینہ سحری سے لے کر غروب آفتاب تک اللہ کی خشنودی کے لیے کھانے پینے سے رک جانا ہے۔ نہ صرف کھانے پینے سے بلکہ ہرقسم کی لغو بات سے رک جاناہے۔ لیکن اللہ تعالیٰ سورت طحہٰ کی پہلی آیت میں یہ فرماتےہیں : ہم نے یہ اس لیے ناز ل نہیں کیا۔ یعنی یہ دین یہ قرآن اس لیے نازل نہیں کیا کہ آپ مشقت میں پڑجائیں۔

اللہ تعالی کا یہ احسان عظیم ہے کہ اس نے اپنے بندوں کے لیے آسان ترین دن اور فطرت کے قریب ترین دین کا انتخا ب کیا۔ اور مختلف عبادات میں ، مختلف رخصتوں سے نوازا ہے ۔ یعنی سکون دیا ہے۔ حاملہ اور بچے کو دودھ پلانے والی عورت کو یہ رخصت عنایت فرمائی ہے ۔ کہ اگر وہ اپنی جسمانی کمزوری یا اپنے بچے کی کمزور ی کے ڈر سے یا دودھ میں نقصان کا خد شہ محسوس کریں۔ تو وہ روزہ نہ رکھیں ۔

بلکہ ہرروزے کے بدلے میں ایک مسکین کو کھانا کھلا دیں۔ اس پر بھی قضاء نہیں ہے۔ جیسا کہ سیدنا انس بن مالک الکعبی سے روایت ہے کہ اس حدیث کا مفہوم ہے کہ ہم پر اللہ کے رسول کے قریب آئے اور آپ کی خدمت میں حاضر ہوئے۔ اور آپ دوپہر کا کھانا تناول فرمارہے تھے ۔ آپ نے فرمایا:قریب ہوجاؤ اور کھاؤ۔ میں نے عرض کیا : میں نفلی روزے سے ہوں۔ یعنی میں نے نفلی روزہ رکھا ہوا ہے۔

آپ نے فرمایا: میں تجھے روزے یا روزوں کے بارے میں بتاؤں یقیناً اللہ تعالیٰ نے مسافر کو روزہ اور آدھی نماز مع اف کی ہے ۔ نیز حاملہ اوردودھ پلانے والی عورت کے روزے مع اف کیے ہیں۔ اللہ کی قسم ! نبی کریمﷺ نے یہ دونوں کلمات کہیں یا دونوں میں سے کہا میں نے نبی کرمﷺ کا کھانا نہ کھایا۔ اسی طرح سیدنا عبداللہ بن عمر سے ایسی حاملہ عورت کے بارے میں پوچھا جسے اپنے بچے کے نقصان کا خط۔ر ہ ہو۔

تو اسے چاہیے کہ روزہ توڑ دیے۔ اس کے بدلے میں ایک مسکین کو تقریبا! ایک وقت کے کھانے کے لیے گند م دیدیں۔ اسی طرح سیدنا عبد اللہ بن عباس سو رت البقرہ کی آیت چوراسی کی یہ تفصیل فرماتے ہیں۔

کہ یہ آیت حاملہ اور دودھ پلانے والی عورت کےلیے ثابت یعنی غیر منسوب رکھی گئی ہے۔ ایک اور جلیل القدر تابع سعید بن جبیر حاملہ اور دودھ پلانے والی عورت جو اپنے بچے کے حوالے سے خوف کا شکار ہو اس کے بارے میں بتاتے ہیں کہ یہ دونوں روزہ نہ رکھیں۔ اور ہر روزے کے بدلے میں ایک مسکین کو کھانا کھلا دیں۔