حضور ﷺ کی سنت کے مطابق خسرہ کا قرآنی آیات سے علاج

ایک موذی مرض جو کہ خسرہ کے نام سے جانا جاتا ہے۔ جس کے بارے میں ہے کہ حضور اکرمﷺ کی سنت کے مطابق اس کا علاج موجود ہے۔ اور حضورپاکﷺ کی سنت کے مطابق آج کا عمل آپ کو بتایا جائےگا۔ آپ کاعلاج آپ کو بتایا جائےگا۔ یہ بہت آسان اور بہت ہی آزمودہ نسخہ ہے۔ اس کے کرنے سے آپکو خسرے سے نجات ملے گی۔

ایک شخص کو خسرہ نکلا۔اس نے حضور اکرم ﷺ کو خواب میں دیکھ کر اپنا مرض بیان کیا۔ حضور اکرمﷺ نے ارشاد فرمایا: کہ تھوڑا سا انگوری نسخہ ، تھوڑا اصلی شہد، تھوڑا سا روغن زیتون ان کو ملالیں۔ اور سارے بدن پر اس کی مالش کریں۔ اس نے ایسا ہی کیا ۔ بحکم الہیٰ اس کو شفاء عطا ہوگئی۔ اب اس میں ایک بات قابل غو ر ہے جو پڑا ہوا زیتون کا تیل ہے اس کو کیسے تیار کرنا ہے۔اس کا بتاتے ہیں۔ پڑا ہوا زیتون کا تیل اتنا تیار کیا جاتا ہے۔ کہ روغن زیتون کو کسی صاف برتن میں رکھیں۔ اس کو کسی چیز سے ہلاتے رہیں۔ سورت توبہ کی آخر ی آیات اور سورت الحشر کی آخری چار آیات اور پھر سورت اخلاص اور آخر ی دو سورتیں پڑھ کر دم کریں۔ اس کو روغن زیتون پر دم کردیں۔ اس تیل کی بدن پر مالش کریں۔ انشاءاللہ خسرہ جیسی بیماریاں اور تمام جسمانی بیماریاں دور ہوجائیں گی۔

اگر کسی کو درد کی تکلیف زیادہ ہے اس کو چاہیے کہ تھوڑی دیر دھو پ میں بیٹھے۔ اور اس جگہ پر تیل کی مالش کرے۔انشاءاللہ روغن زیتون کی برکت اور کلام الہی ٰ کی برکت سے ، خسرہ جیسی بیماری اور جو درد کی تکلیف ہے اس سے فائد ہ ہوگا۔ وہ شفاء ہوگی۔اور اللہ پاک آپ کو خیرو عافیت میں رکھے۔ خسرے کی علامات کیا ہیں۔ یہ ایک بچے سے دوسرے بچے کویا ایک متاثربندے سے دوسرے متاثر بندے کو ہوتا ہے۔ یعنی جس کوجراثیم لگ چکا ہے چاہے وہ کھانسی کی وجہ سے، چھینکوں سے لگا ہے، ناک کے بہنے سے لگا ہے، یا ایسے مریض کے ساتھ اٹھنے بیٹھنے کی وجہ سے لگا ہے، یا اس کے زیر استعمال چیزیں جو اس نے استعمال کی ہیں۔ عموماً آپ نے دیکھا ہے کہ جو بچے سکو ل جاتے ہیں۔ پانچ سے چھ کے عمر کے بچے سکو ل میں کھیلتے ہیں گھروں میں کھیلتے ہیں تو کسی ایک بچے کو وائرس لگ گیا ہے۔

تو دوسرے بچے کو کھانسنے سے منتقل ہوسکتا ہے۔ شروع کے دنوں میں یہ وائر س جس شخص میں ہوتا ہے اس کےکمرے میں چھینکنے سے وہ وائرس اس جگہ پر ایک گھنٹے تک موجو د ہوتا ہے اگر کوئی دوسرا شخص اس جگہ جاتا ہے تو یہ اس کےلیے خطرنا ک ثابت ہوسکتا ہے۔ یہ وائرس عموماً ساتویں دن سے پندرہویں دن تک جسم کے اندر موجود رہتا ہے۔ یہ ملٹی پلائی ہوتا رہتا ہے۔ اور اس کے درمیان مریض کو بخار ہوتا ہے۔ سر میں درد ہوتا ہے۔ آنکھیں سرخ ہوتی ہیں اور ہلکی ہلکی کھانسی ہوتی ہے۔ اورمریض گرا گرا رہتا ہے۔