ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻮﺳٰﯽ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴّﻼﻡ ﮐﮩﯿﮟ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺁﭖ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴّﻼﻡ ﮐﮯ ﮐﻨﺪﮬﮯ ﭘﺮ ﮐﺒﻮﺗﺮ ﭘﻨﺎﮦ ﮔﺰﯾﮟ ﮨُﻮﺍ—مزید پڑھیں

ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻮﺳٰﯽ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴّﻼﻡ ﮐﮩﯿﮟ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺁﭖ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴّﻼﻡ ﮐﮯ ﮐﻨﺪﮬﮯ ﭘﺮ ﮐﺒﻮﺗﺮ ﭘﻨﺎﮦ ﮔﺰﯾﮟ ﮨُﻮﺍ۔ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﮑﮍﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺁﭖ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴّﻼﻡ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻨﺪﮬﮯ ﭘﺮ ﺑﺎﺯ ﺑﮭﯽ ﭘﮩﻨﭻ ﮔﯿﺎ۔

ﮐﺒﻮﺗﺮ ﺁﭖ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴّﻼﻡ ﮐﯽ ﺁﺳﺘﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮ ﮐﺮ ﭘﻨﺎﮦ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺯ ﮐﻮ ﺍﻟﻠّٰﻪ ﺗﻌﺎﻟٰﯽ ﻧﮯ ﺑﻮﻟﻨﮯ ﮐﯽ ﻃﺎﻗﺖ ﺩﯼ۔ﺍﺱ ﻧﮯ ﻋﺮﺽ ﮐﯽ ﮐﮧ :” ﺍﮮ ﺍِﺑﻦِ ﻋﻤﺮﺍﻥ ‏( ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴّﻼﻡ !( ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﺳﮯ ﺑﮯ ﻣُﺮﺍﺩ ﻧﮧ ﺟﺎﺅﮞ ﮔﺎ ﺍﻭﺭ ﺁﭖ ﻣﯿﺮﮮ ﺭِﺯﻕ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺣﺎﺋﻞ ﻧﮧ ﮨﻮﮞ۔

ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻮﺳٰﯽ ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴّﻼﻡ ﻧﮯ ﺩِﻝ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﭼﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﺍ ﺍِﻣﺘﺤﺎﻥ ﮨﮯ۔ﺍﺳﯽ ﻟﯿﮯ ﺑﺎﺯ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﮐﺒﻮﺗﺮ ﻧﮯ ﭘﻨﺎﮦ ﻣﺎﻧﮕﯽ ﮨﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻭﻋﺪﮦ ﭘﻮﺭﺍ ﮐﺮﻧﺎ ﮨﮯ۔ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﯿﺠﯿﮯ۔

ﮨﺎﮞ ! ﺍﮔﺮ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﮔﻮﺷﺖ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻟﯿﺠﯿﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﺭﺍﻥ ﮨﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﮔﻮﺷﺖ ﻟﯿﺠﯿﮯ۔ ” ﺑﺎﺯ ﺍﻭﺭ ﮐﺒﻮﺗﺮ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺑﻮﻝ ﭘﮍﮮ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ” ﺍﮮ ﺍِﺑﻦِ ﻋﻤﺮﺍﻥ ‏( ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴّﻼﻡ !( ﺟﻠﺪﯼ ﻧﮧ ﮐﯿﺠﯿﮯ۔

ﮨﻢ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺍﻟﻠّٰﻪ ﮐﮯ ﺑﮭﯿﺠﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻓﺮﺷﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﯽ ﺁﺯﻣﺎﺋﺶ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺗﮭﮯ۔ ”ﻧﺎﻡ ﮐﺘﺎﺏ = ﺗﻔﺴِﯿﺮ ﺭُﻭﺡ ﺍﻟﺒﯿﺎﻥ ‏( ﭘﺎﺭﮦ : ۱۶،ﺟِﻠﺪ ٦ ‏)ﺻﻔﺤﮧ =۳٥٤ﻣُﺼَﻨّﻒ = ﻋﻼﻣﮧ ﺍِﺳﻤٰﻌﯿﻞ ﺣﻘﯽ ﺭﺣﻤﺘﮧ ﺍﻟﻠّٰﻪ ﻋﻠﯿﮧ۔

ﻣﺘﺮﺟﻢ = ﺷﯿﺦ ﺍﻟﻘُﺮﺁﻥ ﻭﺍﻟﺘﻔﺴِﯿﺮ ﻭﺍﻟﺤﺪﯾﺚ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻼﻣﮧ ﻣُﻔﺘﯽ ﻣﺤﻤﺪ ﻓﯿﺾ ایک عورت آنسو بہاتے ہوئے امیر المومنین حضرت عمرؓ کے پاس آئی اس کا حال یہ تھا کہ کپڑے میلے کچیلے تھے، ننگے پاؤں تھی، پیشانی اور رخساروں سے خون بہہ رہا تھا اور اس عورت کے پیچھے ایک طویل القامت آدمی کھڑا تھا،۔

اس آدمی نے زور دار آواز میں کہا: اے زانیہ، حضرت عمرؓ نے فرمایا: مسئلہ کیا ہے؟ اس آدمی نے کاہ کہ اے امیر المومنین! اس عورت کو سنگسار کریں، میں نے اس سے شادی کی تھی اور اس نے چھ مہینہ میں ہی بچہ جنم دیا ہے۔ حضرت عمرؓ نے اس عورت کو سنگسار کرنے کا حکم دے دیا۔

حضرت علیؓ نے جو حضرت عمرؓ کے برابر بیٹھے تھے، کہا: امیر المومنین! یہ عورت زنا سے بری ہے۔ حضرت عمرؓ نے فرمایا کہ وہ کیسے؟ حضرت علیؓ نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ کا ارشاد ہے: ’’وَ حَمْلُہ وَ فِصَالُہ ثَلٰثُوْنَ شَھْراً‘‘ (الاحقاف:15) اور دوسری جگہ فرمایا ہے: ’’وَ فِصَالُہ فِیْ عَامِیْنِ‘‘ (لقمان:14) تو جب ہم اس سے رضاعت کی مدت نکالیں گے جو کہ تیس مہینوں میں سے چوبیس مہینے ہیں تو چھ ماہ ہی باقی رہ جائیں گے،۔ لہٰذا ایک عورت چھ ماہ میں بچہ جن سکتی ہے۔ (یہ سن کر) حضرت عمرؓ کا چہرہ دمک اٹھا اور فرمایا: اگر (آج) علیؓ نہ ہوتے تو عمرؓ ہلاک ہو جاتا۔

ﺍﯾﮏ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺩﻭ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﺳﻔﺮ ﭘﺮ ﺗﮭﮯ، ﺍﯾﮏ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺗﯿﻦ ﺭﻭﭨﯿﺎﮞ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﭘﺎﻧﭻ ، ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻣﻠﮑﺮ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﮨﯽ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺍﺗﻨﮯﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺗﯿﺴﺮﺍ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﺑﮭﯽ ﺁﮔﯿﺎ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﯾﮏ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﻓﺮﺍﻏﺖ ﮨﻮﺉ ﺗﻮﺍﺱ ﻧﮯ ﺁﭨﮫ ﺩﺭﮨﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﺣﺼﮧ ﮐﯽ ﺭﻭﭨﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﺩﮮ ﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮪ ﮔﯿﺎ ۔ ﺟﺲ ﺷﺨﺺ ﮐﯽ ﭘﺎﻧﭻ ﺭﻭﭨﯿﺎﮞ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﯿﺪﮬﺎ ﺣﺴﺎﺏ ﯾﮧ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﭘﺎﻧﭻ ﺭﻭﭨﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﭘﺎﻧﭻ ﺩﺭﮨﻢ ﻟﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻮ ﺗﯿﻦ ﺭﻭﭨﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﺗﯿﻦ ﺩﺭﮨﻢ ﺩﯾﻨﮯ ﭼﺎﮨﮯ ۔

ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺭﺍﺿﯽ ﻧﮧ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﻧﺼﻒ ﮐﺎ ﻣﻄﺎﻟﺒﮧ ﮐﯿﺎ ،ﯾﮧ ﻣﻌﺎﻣﻠﮧ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺶ ﻫﻮﺍ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ ﻧﮯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻮ ﻧﺼﯿﺤﺖ ﻓﺮﻣﺎﺉ ﮐﮧ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺭﻓﯿﻖ ﺟﻮ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺍﺳﮑﻮ ﻗﺒﻮﻝ ﮐﺮ ﻟﻮ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮭﺎﺭﺍ ﻧﻔﻊ ﮨﮯ ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﺣﻖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺟﻮ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮨﻮ ﻣﺠﮭﮯ ﻣﻨﻈﻮﺭ ﮨﻮﮔﺎ ۔

ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﺣﻖ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﻢ ﮐﻮ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﺩﺭﮨﻢ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺳﺎﺗﮭﯽ ﮐﻮ ﺳﺎﺕ ﺩﺭﮨﻢ ﻣﻠﻨﮯ ﭼﺎﮨﺌﯿﮟ ، ﺍﺱ ﻋﺠﯿﺐ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﺳﮯ ﻭﮦ ﻣﺘﺤﯿﺮ ﮨﻮﮔﯿﺎ۔ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺗﻢ ﺗﯿﻦ ﺁﺩﻣﯽ ﺗﮭﮯ ﺗﻤﮭﺎﺭﯼ ﺗﯿﻦ ﺭﻭﭨﯿﺎﮞ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺭﻓﯿﻖ ﮐﯽ ﭘﺎﻧﭻ ، ﺗﻢ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﮐﮭﺎﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺗﯿﺴﺮﮮ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﮐﺎﺣﺼﮧ ﺩﯾﺎ ،۔

ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺗﯿﻦ ﺭﻭﭨﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺣﺼﮯ ﺗﯿﻦ ﺟﮕﮧ ﮐﺌﮯﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ 9 ﭨﮑﮍﮮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ۔ﺗﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﻮ ﭨﮑﮍﻭﮞ ﮐﻮ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ 15 ﭨﮑﮍﻭﮞ ﮐﻮ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﻭ ﺗﻮ24 ﭨﮑﮍﮮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﯿﻨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﻧﮯ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﭨﮑﮍﮮ ﮐﮭﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻓﯽ ﮐﺲ 8 ﭨﮑﮍﮮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ۔ﺗﻢ ﻧﮯ 9 ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺁﭨﮫ ﺧﻮﺩ ﮐﮭﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺗﯿﺴﺮﮮ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﮐﻮ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﺭﻓﯿﻖ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ 15 ﭨﮑﮍﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ 8 ﺧﻮﺩ ﮐﮭﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ 7 ﺗﯿﺴﺮﮮ ﮐﻮ ﺩﺋﯿﮯ ۔