اقوال زری

اقوال زریں جب تجھے دعوت دی جائے تو یاد رکھ سب سے اونچی جگہ نہ بیٹھنا تاکہ اگر میزبان کا تجھ سے بڑا دوست آجائے تو میزبان تجھ سے یہ نہ کہے اٹھو اور نیچے بیٹھ جاؤ ۔

ایسا تمہارے لیے باعث شرمندگی ہو گا اس لیے سب سے حقیر جگہ بیٹھ، تاکہ جس نے تجھے دعوت دی ہے وہ آ کر کہے “اٹھ دوست اور یہاں اوپر آکر بیٹھ” اس طرح تیری بڑی عزت ہو گی

” یاد رکھو جو بھی خود کو بلند کرتا ہے پست کیا جاتا ہے اور جو خود کو پست کرتا ہے بلند کیا جاتا ہے ایک بری عورت بے شمار مردوں کو گمراہ کر سکتی ہے

مگر بے شمار مرد مل کر بھی ایک نیک عورت کو گمراہ نہیں کر سکتے جب بارش ہوتی ہے تو خالی گڑھے باران رحمت سے خودبخود بھر جاتے ہیں اور موٹے موٹے اور اونچے ٹیلے ویسے سوکھے ہی رہ جاتےہیں

اپنے آپ کو خالی رکھو کیونکہ خالی جھولی ہی بھری جاتی ہے ہمیشہ چار دیواری میں رہنے والی لڑکیوں کے عشق سے ڈرو ،

انہوں نے دنیا نہیں دیکھی ہوتی،وہ جسے چاہتی ہیں بےانتہا چاہتی ہیں کیونکہ وہی ان کی دنیا ہوتی ہے دنیا کی سب سے بھاری چیز آدمی کی خالی جیب ہوتی ہے اور خالی جیب کے ساتھ چلنا نہایت مشکل ہے

امیر کو رزق میں کچرا نظر آتا ہے اور غریب کچرے میں بھی رزق دیکھ لیتا ہے جیسا سوچو گے ویسا ہی بنو گے تمہاری سوچ ہی تمہاری تقدیر ہے