تہجد کے وقت اٹھنے والا بہت ہی خوش نصیب انسان ہوتا ہے ۔جو انسان اپنے بستر کو چھوڑ کر اللہ کی بارگاہ میں حاضر ہوتا ہے

تہجد کے وقت اٹھنے والا بہت ہی خوش نصیب انسان ہوتا ہے ۔

جو انسان اپنے بستر کو چھوڑ کر اللہ کی بارگاہ میں حاضر ہوتا ہے ،اپنے گناہوں کی معافی مانگتا ہے ،اللہ کا ذکر کرتا ہے ایسے انسان سے اللہ پاک اتنی محبت کرتا ہے اس سے اتنا خوش ہو جاتا ہےکے اپنے بندے کی سارے گناہ معاف کر دیتا ہے ۔

یہ وقت بہت ہی فضیلت والا اور عظمت والا ہوتا ہے۔تہجد کے وقت صرف وہی اٹھتا ہے جسے علی سے محبت اور لگن ہوتی ہے ۔۔

آپ نے ایسے بندو کے لئے اللہ تعالی نے قرآن میں فرمایا ہے:ان کے لئے ایسی چیزیں ہونگی جو کسی آنکھ نے نہیں دیکھی اور نہ ہی کسی کان نے سنی اور نہ ہی کسی کے دل میں وہ بات آئی ہوگی ۔

کسی انسان کو علم ہی نہیں کہ اللہ تعالی نے جنت میں کیسی کیسی نعمتیں اور لذتیں چھپا رکھی ہیں۔

اس وقت میں جو انسان دو چیزیں کا لیتا ہے اللہ تعالی اس کے لیے بہت ہی بہترین کردیتا ہے اور اس کی ہر جائز خواہش پوری کر دیتا ہے ۔سب سے پہلی چیز ہے استغفار کرنا ۔اس سے انسان کے گناہ معاف ہو جاتے ہیں اور یاد رکھیں جب انسان گناہ سے پاک ہو جاتا ہے تو وہ اپنے آپ کو بہت ہلکا محسوس کرتا ہے ۔

اس کو کرنے سے انسان کی ہر مراد پوری ہو جاتی ہے اور اللہ تعالی اس کو دنیا میں سکون دے دیتے ہیںدوسری چیز جو اللہ تعالیٰ آپنے ایسے بندے کے لئے عطا فرماتے ہیں وہ ہی جنت جو نہ کسی آنکھ نے دیکھی ہے۔

کوئی سوچ بھی نہیں سکتا کہ وہ کیسی ہوگی ۔انسان کا دماغ میں وہاں تک سوچ نہیں سکتا ۔

جن لوگوں نے اپنی نفس کی خواہشات کو پاک رکھا ہوگا تو اللہ تعالی اس کو ہر نعمت سے نواز دیں گے ۔اللہ تعالی کو رات کے اس پہلے میں اپنے بندے کی عبادت بہت پسند ہے ۔